Over 3,000 Ceasefire Violations by Pakistan Along LoC this year
RS passes Insolvency and Bankruptcy Code (2nd Amendment) Bill
NIA arrests 9 Al-Qaeda terrorists planning attacks at vital installations
IPL kicks off in Abu Dhabi
Army initiates disciplinary proceedings against its troops in killing of 3 men in kashmir
FreeCurrencyRates.com

इंडियन आवाज़     20 Sep 2020 11:14:44      انڈین آواز

زہر اگلنے والے میڈیا پر لگام کسنے کامعاملہ جب تک عدالت حکم نہیں دیتی حکومت کچھ نہیں کرتی، چیف جسٹس آف انڈیا

 جمعیة علماءہندکی عرضداشت پر چیف جسٹس آف انڈیا نے ایکسپرٹ باڈی کی رائے طلب کی، سماعت دو ہفتہ کے لیئے ملتوی

نئی دہلی 7 اگست
مسلسل زہر افشانی کرکے اور جھوٹی خبریں چلاکر مسلمانوں کی شبیہ کوداغدار اور ہندووں اورمسلمانوں کے درمیان نفرت کی دیوارکھڑی کرنے کی دانستہ سازش کرنے والے ٹی وی چینلوں کے خلاف داخل کی گئی جمعیة علماءہند کی عرضی پر آج سپریم کورٹ آف انڈیا میں سماعت عمل میں آئی جس کے دوان عدالت میں مرکزی حکومت نے حلف نامہ داخل کرتے ہوئے جمعیة علماءہند کی عرضداشت کو خارج کیئے جانے کی درخواست کی اور کہا کہ میڈیا کو خبریں نشر کرنے کی آزادی ہے جبکہ نیوز براڈ کاسٹ ایسو سی ایشن نے بھی حلف نامہ داخل کرتے ہوئے عدالت کو بتایا کہ عرض گذار کو سپریم کورٹ سے شکایت کرنے سے پہلے اس کے سامنے مبینہ فیک نیوز چینلز کی شکایت کرنا چاہئے تھی اور اگر وہ اس پر کارروائی نہیں کرتے تب انہیں عدالت کا دروازہ کھٹکھٹا نا چاہئے تھا۔
اسی درمیان پریس کونسل آف انڈیا کی جانب سے پیش ہوئے سینئر ایڈوکیٹ پرتیش کپور نے کہا کہ ہم نے پچاس ایسے معاملات کو نوٹس لیا اور اس کی جانچ ہورہی ہے اور جلد اس پر فیصلہ جاری کریں گے، ایڈوکیٹ بھیمانی نے بھی کہا کہ انہیں بھی فیک نیوز کی سو سے زائد شکایتیں موصول ہوئی ہیں اوروہ اس پر کارروائی کررہے ہیں جس پر جمعیة علماءہند کی جانب سے بحث کرتے ہوئے سینئر ایڈوکیٹ دشینت دوے نے چیف جسٹس آف انڈیا اے ایس بوبڑے ، جسٹس اے ایس بوپننا اور جسٹس رشی کیش رائے پر مشتمل تین رکنی بینچ کو بتایا کہ یہ لوگ کچھ نہیں کررہے ہیں ، دو ماہ سے زائد کا عرصہ گذر گیا ہے ابھی تک انہوں نے ایک شکایت پر مثبت کارروائی نہیں کی، بس عدالت میں بیان دے رہے ہیں کہ جانچ جاری ہے اور عدالت کا وقت ضائع کررہے ہیں۔
ایڈوکیٹ دوے نے کہا کہ یہ تنظیمیں صرف ایڈوائزری تنظیمیں ہیں ، یہ کوئی ایکشن نہیں لے سکتی ہےں، صرف حکومت ایکشن لے سکتی ہے لہذا عدالت کو چاہئے کہ حکومت کو حکم جاری کرے جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ وہ ایکسپرٹ باڈی کی رائے طلب کررہے ہیں اورایکسپرٹ باڈی کی رائے آنے کے بعد کارروائی کی جائے گی۔دوران بحث ایڈوکیٹ دشینت دوے نے عدالت کو بتایا کہ اپریل ماہ میں وزیر اعظم ہند نریندر مودی نے خودکہا تھا کہ کرونا بیماری کو مذہبی رنگ نہ دیا جائے اس کے بعد بھی نیوز چینلز نے اسے مذہبی رنگ دیا جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ ہمیں ایکسپرٹ باڈی کی ضرروت ہے جو اس کی جانچ کریگی جس پر ایڈوکیٹ دوے نے کہا کہ ہم ابتک دو ماہ ضائع کرچکے ہیں۔ چیف جسٹس نے کہا کہ وہ رپورٹ طلب کررہے ہیںجس پر ایڈوکیٹ دوے نے کہا کہ رپورٹ طلب کرنے کی ضرورت ہی نہیں ہے۔جمعیةعلماءہند کی جانب سے داخل کی گئی عر ضداشت جس میں سیکریٹری قانونی امداد کمیٹی گلزار اعظمی عرض گذار بنے ہیں پربحث کرتے ہوئے ایڈوکیٹ دشینت دوے نے عدالت کو بتایا کہ پریس کونسل آف انڈیا اور نیوز براڈ کاسٹرس ایسو سی ایشن صرف ان کے ممبران پر کارروائی کرسکتی ہے لیکن اس معاملے میں کئی ایک ایسے ادارے بھی ہیں جو ان کے ممبر نہیں لہذا ان پر کاررائی کون کریگا؟ اس لیئے حکومت اس معاملے میں فیک نیوز چینلز پر کارروائی کرے۔ایڈوکیٹ دشینت دے نے عدالت کو بتایا اس معاملے میں حکومت بھی کچھ نہیں کررہی ہے جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ یہ ہمارا تجربہ ہے کہ جب تک ہم حکومت کو حکم نہیں دیتے حکومت کچھ نہیں کرتی ، چیف جسٹس نے یونین آف انڈیا کی نمائندگی کرنے والے ایڈوکیٹ تشار مہتا کو کہا وہ ان کو تنقید کا نشانہ نہیں بنا رہے ہیں لیکن یہ حقیقت ہے کہ عدالت جب تک حکومت کو حکم نہیںدیتی کچھ نہیں کرتی۔اسی درمیان چیف جسٹس آف انڈیا نے نیوز براڈ کاسٹر ایسو سی ایشن کو نوٹس جاری کرتے ہوئے ان سے دریافت کیا کہ آیا یہ معاملہ ان کے پاس بھیجا جاسکتا ہے جس پر ایڈوکیٹ دوے نے کہا کہ عدالت کو اس معاملے پر خود فیصلہ کرنا ہوگا کیونکہ اس طرح سے صرف وقت ضائع ہورہا ہے جس پر عدالت نے ایڈوکیٹ دوے کو کہا کہ وہ ان کی عرضداشت پر سماعت دو ہفتہ کے لیئے ملتوی کررہے ہیں اور اس درمیان ایکسپرٹ باڈی اور دیگر اداروں کو ان کی رائے داخل کرنے کا حکم دیا۔دوران بحث ایڈوکیٹ دوے نے عدالت کو بتایا کہ صحافتی اصول کا تو یہ تقاضہ ہے کہ کوئی بھی خبر شائع یا نشرکرنے سے پہلے اس بات کی باضابطہ طورپر تصدیق کی جائے کہ آیا خبر میں جو کچھ کہا گیا ہے صحیح ہے یاغلط مگر میڈیا ایسانہیں کررہا ہے، انہوں نے کہا کہ ہماراقانون یہ بھی کہتاہے کہ اس طرح کی کوئی خبر شائع یا نشرنہیں کی جانی چاہئے جس سے کسی شخص یا فرقہ کی بدنامی یا دل آزاری ہویا جس سے لوگوں کے مذہبی جذبات مجروح ہوتے ہوں۔اس سے قبل گزشتہ سماعت کے موقع پر ایڈوکیٹ آن ریکارڈ اعجازمقبول نے عدالت کی توجہ ان دیڑھ سو چینلوں اور اخبارات کی جانب دلائی تھی جس میں انڈیا ٹی وی،زی نیوز، نیشن نیوز،ری پبلک بھارت،ری پبلک ٹی وی،شدرشن نیوز چینل اور بعض دوسرے چینلوں کی جانب دلائی تھی جنہوں نے صحافتی اصولوں کو تار تار

کرتے ہوئے مسلمانوں کی دل آزاری اور قومی یکجہتی کو نقصان پہنچانے کی ناپاک سازش کی تھی۔

PRESS RELEASE

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

SPORTS

BFI President Ajay Singh and Executive Council’s tenure extended for 3 months

Harpal Singh Bedi/ New Delhi The Boxing Federation of India (BFI) Saturday extended the tenure of its presi ...

Ricky Ponting and Shreyas Iyer hope for a strong start from Delhi Capitals

Harpal Singh Bedi / New Delhi Delhi Capitals head coach Ricky Ponting and captain Shreyas Iyer on Saturday ...

خبرنامہ

کرونا وبا ‘کنٹرول سے باہر’ ہو چکی ہے: سیکریٹری جنرل اقوام متحدہ

ویب ڈیسک —اقوامِ متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتیرس نے خ ...

بھارتی فوج نے کہا ہے کہ اُس نے کسی بھی مرحلے پر ایل اے سی کو پار نہیں کیا ہے

فوج نے آج زور دے کر کہا ہے کہ بھارت، حقیقی کنٹرول لائن سے، فوج ...

ملک میں عالمی وبا سے تقریباً33 لاکھ 24ہزار افراد شفایاب

ملک میں عالمی وبا سے تقریباً33 لاکھ 24ہزار افراد شفایابہوچکے ہ ...

TECH AWAAZ

Covid 19 induces scientists to work for Fastest Innovations for Survival

From Touchless Soap & Water Dispenser, Mechanical Ventilator to Pioneering E-classroom Software or Low-cos ...

Digital tech companies have responsibility to abide by govt rules: India

WEB DESK India has said it remains open and continues to welcome FDI in the country including in the area o ...

MARQUEE

PMO ensures network connectivity for young girl for classes

WEB DESK A direct intervention by the Prime Minister’s Office has ensured that a young girl in Maharashtr ...

Woman gives birth to baby girl on NDRF rescue boat in flood-hit Bihar

It was the 10th childbirth including a twins on an NDRF boat while evacuating expecting mothers from flood-hit ...

@Powered By: Logicsart

Do NOT follow this link or you will be banned from the site!