FreeCurrencyRates.com

इंडियन आवाज़     17 Dec 2018 01:06:01      انڈین آواز
Ad

عوام سمجھ چکے ہیں مودی کی جملے بازی: اکھلیش یادو

akhilesh-new-sp-chief 

  شبیہ الحسن نقوی

لکھنؤ۔ سماج وادی پارٹی کے قومی صدر اکھلیش یادو نے بھارتیہ جنتا پارٹی کے صدر امت شاہ اور اسے پیدا کرنےو الے راشٹریہ سوئم سیوک سنگھ پر سخت حملہ کیا۔ انہو ںنے بی جے پی صدر امت شاہ کو ملک کا سب سے بڑا غنڈہ بتایا تو آر ایس ایس کو انگریزوں کے تلوے چاٹنے والا کہہ کر حملہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی نعرہ تو ترقی کا دیتی ہے مگر اصل میں وہ ہندو مسلم کے بیچ نفرت پھیلاکر سماج کو بانٹنا چاہتی ہے۔ انہو ںنے کہا کہ اگر وہ بھی ہوائی وعدے اور جملے بازی کریں، پندرہ کے بجائے تیس لاکھ روپئے سب کے اکاؤنٹ میں دینے کا وعدہ کریں تو کیا سب انہیں ووٹ دیںگے؟ انہوں نے صوبے میں خراب نظم ونسق کے لئے یوگی سرکار پر بھی نشانہ سادھا۔

پچھلے دنوں پہلےبنارس میں مودی کی جملے بازی پر طنز کرنے والے اکھلیش یادو نے اس کے بعدممبئی میں ہوئی ریلی کے دوران امت شاہ کو سب سے بڑا غنڈہ بتایا۔ انہو ںنے کہا کہ آر ایس ایس نے ملک کی آزادی کے لئے کوئی کام نہیں کیا۔ جب آزادی کے لئے ہندو مسلم مل کر انگریزوں سے لڑ رہے تھے اس وقت آر ایس ایس کے لوگ انگریزوں کی مخبری کررہے تھے اورخوشامدیوں میں شامل تھے۔ انہو ںنے کہا کہ آج بی جے پی ہندو مسلم کے بیچ نفرت پھیلانے کی سیاست کر رہی ہے۔ جبکہ مسلمانوں نے اس وطن کی آزادی کے لئے اپنا خون بہایا ہے۔ یہاں تک کہ ترنگے کا رنگ تک مسلمانوں کا دیا ہوا ہے۔ مگر انہیں کبھی گئو کشی تو کبھی لو جہاد کے نام پر بدنام کیا، مارا پیٹا اور قتل کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی کی جملے باز سرکار میں نوجوان بے روزگار ہیں اور کسان پریشان۔ بنارس کی ریلی میں اکھلیش نے چوہان اور موسٹ بیک ورڈ ووٹ بینکوں پر اپنی نظر رکھی۔اکھلیش یادو نے اپنی سرکار کے ذریعہ کرائے گئے ترقیاتی کاموں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ نہ تو کسی کے کھاتے میں پندرہ لاکھ روپئے آئے ،نہ کسانوں کا قرض معاف ہوا،نہ نوجوانوں کو نوکری ملی۔ اب کہا جارہا ہے کہ نوکری نہیں روزگار کا وعدہ کیا تھا، سڑک پر چائے پکوڑے بیچنے والا بھی تو روزگار سے لگا ہے۔ نوٹ بندی، جی ایس ٹی سے تو پورے ملک کے عوام اور کاروباری پریشان ہیں۔ اترپردیش کی یوگی سرکار نظم ونسق کے مورچہ پر ناکام ثابت ہورہی ہے۔

اکھلیش یادو نے کہا کہ اس ملک میںسب سے بڑا غنڈا کون ہے؟ تو وہ امت شاہ ہیں۔ وہ آج لیڈر بن کر گھوم رہے ہیں۔ آر ایس ایس نے کیا کیا؟ آر ایس ایس نے بس انگریزوں کے تلوے چاٹے باقی تو کچھ نہیں کیا۔ بھارت دیشکے لئے سبھی نعرے مسلموں نے دیئے، ہندو مسلم اتحاد دکھایا۔ ترنگے کا رنگ بھی ایک مسلم نے دیا۔ اس کے ساتھ ہی اکھلیش نے کہا کہ لو جہاد کے مدّے پر مسلمانوں کو بدنام کیا جارہا ہے۔ اکھلیش یادو نے بی جے پی اور آر ایس ایس پر ’’بانٹنے والی سیاست‘‘ کو لے کر نشانہ سادھا اور کہا کہ اگر موجودہ سرکار کو اقتدار سے نہیں ہٹایا گیاتو یہ ملک کے لئےنقصان دہ ثابت ہوگا۔انہوں نے کہا، ’’پہلی بات یہ کہ سرکار عوام سے ایک جھوٹا وعدہ کرکےلوگوں کو بےوقوف بنا کر آئی کہ وہ سبھی کے کھاتے میں پندرہ لاکھ روپئے جمع کرائےگی۔ اقتدار سنبھالنے کے بعد وہ بانٹنے و الی سیاست میں لگے ہیں اور فرقہ وارانہ مدّے اٹھا رہی ہے تاکہ لوگ بے روزگاری، بھکمری اور کسانوں کی خودکشی کے مدّوں کو بھول جائیں‘‘۔ انہو ںنے کہا کہ آر ایس ایس سے ہدائت پاکر سرکار آئین کے اصولوں کو بگاڑنے کی کوشش کررہی ہے۔ چونکہ بی جے پی نے ۲۰۱۴ کے لوک سبھا اور ۲۰۱۷ کے اسمبلی الیکشن میں چھوٹی چھوٹی پارٹیوں کی ناؤ پر سوار ہو کر کامیابی حاصل کی تھی۔ اب ۲۰۱۹ کے چناؤ کے لئے سماج وادی پارٹی بھی اسی راہ پر چل پڑی ہے۔ چار فروری کو اکھلیش یادو نے وزیر اعظم مودی کے لوک سبھا حلقہ وارانسی میں ہی اس سمت میں ایک مضبوط قدم رکھا۔ اکھلیش نے پروانچل کی مقامی سیاسی پارٹی جن وادی سوشلسٹ پارٹی کے منچ سے چوہان اور ’مہا پچھڑا ‘ ووٹ بینک کو سادھنے کی کوشش کی۔

سمراٹ پرتھوی راج چوہان کے نام پر جن وادی سوشلسٹ پارٹی کی طرف سے ہوئی ریلی میں اکھلیش نے کہا کہ ’’ملک کا نقشہ کچھ اور ہوتا اگر سمراٹ پرتھوی راج چوہان کے ساتھ دھوکہ نہ ہوتا۔ تاریخ کو اگر پڑھیں گے تو پتہ چلے گا کہ ان کے ساتھ دھوکہ ہوا۔ اس لئے میں یہ کہنے آیا ہوں کہ اب آپ لوگ دھوکے میں مت آنا‘‘۔ اکھلیش نے کہا کہ ابھی کوئی الیکشن دور دور تک نہیں ہے لیکن میں یہاں آیا ہوں۔ صرف اتنا کہنے کہ اگر ہم سماج وادیوں سے کوئی غلطی ہوئی ہو تو ہم آپ کو گلے لگانے آئے ہیں۔

اکھلیش نے پی ایم مود ی اور سی ایم یوگی کو آڑے ہاتھوں لیا۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی سے پرفریب وعدہ کوئی کر نہیں پاتا، تبھی تو پی ایم نے وعدہ کیا تھا، پانچواں بجٹ بھی آگیا ہے، اب تو پندرہ لاکھ کا انتظار نہیں ہے نہ۔ اگر وہ پندرہ لاکھ دے رہے ہیں تو میں بھی وعدہ کرتا ہوں کہ ہم تیس لاکھ دیں گے۔ لیکن ہم سے حساب مت مانگنا کیونکہ جب بی جے پی نے نہیں دیا تو ہم کیا دیں گے؟ کسانوں کا قرض نہیں معاف ہوا، نوکری ہے ہی نہیں اور نوجوانوں کو کروڑوں نوکری کا وعدہ دے دیا۔ معیشت بےحال ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے ۱۰۸ اور ۱۰۲ ایمبولینس شروع کیں۔ ہم نے ۱۰۰ نمبر کی گاڑیاں اتاریں تاکہ گاؤں دیہات میں ان کی پہونچ ہو۔ دنیا میں اس سے بہتر کوئی سہولت نہیں ہے۔ پولیس والے بھی من ہی من کہتے ہیں کہ ۱۰۰ نمبر اچھی سروس ہے۔ آج چھوٹے پولیس والوں سے بڑے افسر ناراض ہیں کیونکہ ہم نے ان کو بھی انووا دے دی ۔ اس کے بعد بھی نئے وزیر اعلیٰ بنارس میں آکر بولے کہ ۱۰۰ نمبر میں کرپشن ہو رہا ہے۔ اگر ایسا ہے تو اسے روکنے کی ذمہ داری تو وزیر اعلیٰ کی ہے یا جس نے انہیں گاڑیاں دیں وہ انہیں روکے گا۔ اگر ایسا ہے تو سماجو ادی پارٹی کے ہاتھوں میں اقتدار دے دیں تو یوگی جی کی یہ شکائت فوراً دور کی جائے گی۔

اکھلیش یادو نے اترپردیش کی بی جے پی سرکار پر جرائم پر قابو پانے میں ناکام رہنے کاالزام لگایا۔ انہوںنے کہا کہ پولیس والے بی جے پی ورکرس کے طور پر کام کررہے ہیں۔ اچھے افسران کو موقع نہیں دیا جا رہا ہے۔ پولیس افسر بی جے پی لیڈران کو خوش کرنے میںلگےہیں۔ انہوں نے کہا کہ جو افسر بی جے پی لیڈران کے اشارے پر کام کررہے ہیں انہیں تعیناتی دی جا رہی ہے جبکہ اچھے افسران کی ان دیکھی کی جار ہی ہے۔ اس سے مجرم سرگرم ہو گئے ہیں۔ نوئیڈا، متھرا، سیتا پور، میرٹھ، اعظم گڑھ اور ریاست کے دیگر ضلعوں میں ہوئی وارداتوں کا ذکر کرتے ہوئے اکھلیش نے الزام لگایا کہ جرائم کا گراف لگاتار چڑھ رہا ہے۔ انہو ںنے کہا کہ وزیر اعلیٰ یوگی کہتے ہیں کہ مجرموں کو ریاست سے جانا ہوگا، لیکن جرائم کی جو صورتحال ہے، وہ کچھ اور کہانی کہہ رہی ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ مجرموں کو اترپردیش میں بنے رہنے کا پیغام دیا گیا ہے۔ اکھلیش نے کہا کہ سماجوادی پارٹی کی سرکار میں بی جے پی کہتی تھی کہ سماجوادی پارٹی کے لوگ تھانے چلا رہے ہیں۔ اب بی جے پی کو بتانا چاہئے کہ تھانے کون چلا رہا ہے اور اتنی خراب حالت کے لئے ذمہ دار کون ہے۔

نئے پولیس ڈی جی او پی سنگھ کے بارے میں اکھلیش نے کہا کہ وہ اچھے افسر ہیں۔ دیکھتے ہیں کہ بی جے پی کے لوگ انہیں کام کرنے دیتے ہیں یا نہیں ۔ اترپردیش میں مجوزہ’انویسٹرس میٹ‘ کے بارے میں اکھلیش نے کہا کہ جب ریاست کا ماحول ٹھیک ہوگا تبھی تو لوگ آئیں گے۔ موجودہ صورتحال میں تو کوئی سرمایہ کار اترپردیش میں کام نہیں کرنا چاہے گا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Ad
Ad

SPORTS

Hockey Federation reprimands coach Harendra for his outburst against umpires

Harpal Singh Bedi / Bhubaneswar The International Hockey Federation (FIH) on Sunday officially reprimanded In ...

Australia humiliates England 8-1 to claim Hockey World Cup Bronze

    Harpal Singh Bedi / Bhubaneswar A rampaging Australia pumped out all their pent up frus ...

Hockey: Belgium win maiden World Cup title, Netherlands miss history and cup

    Harpal Singh Bedi / Bhubaneswar Playing to the script, Belgium held their nerves and downed ...

Ad

MARQUEE

Major buildings in India go blue as part of UNICEF’s campaign on World Children’s Day

Our Correspondent / New Delhi Several monuments across India turned blue today Nov 20 – the World Children ...

US school students discuss ways to gun control

             Students  discuss strategies on legislation, communities, schools, and mental health and ...

CINEMA /TV/ ART

Threat to Dilip Kumar’s Bungalow, Saira Banu Seeks PM’s Help

In January, the Economic Offences Wing of the Mumbai Police had registered a case of cheating against builder ...

Malayalam, Ladakhi films win big at IFFI

By Utpal Borpujari / Panaji (Goa) Indian cinema scored big at the 49th International Film Festival of India ( ...

Ad

@Powered By: Logicsart