Ad
FreeCurrencyRates.com

इंडियन आवाज़     26 Sep 2018 02:43:59      انڈین آواز
Ad

عاصمہ جہانگیر کو سپرد خاک کر دیا گیا

asma jehangir
پاکستان میں انسانی حقوق کے کمیشن کی شریک بانی، سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کی سابق صدر اور ممتاز قانون دان عاصمہ جہانگیر کے جسد خاکی کو لاہور میں بیدیاں روڈ پر واقع ان کے ذاتی فارم ہاؤس میں سپرد خاک کر دیا گیا ہے۔

اس سے پہلے منگل کی سہ پہر عاصمہ جہانگیر کی نماز جنازہ قذافی اسٹیڈیم کے باہر ادا کی گئی، اس موقعے پر سیکورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے۔ قذافی سٹیڈیم آنے والے تمام راستوں کو ہر طرح کی ٹریفک کے لیے بند کر دیا گیا اور نماز جنازہ میں آنے والوں کو ایک ہی راستے سے تلاشی لیے جانے کے بعد شرکت کی اجازت دی گئی۔

عاصمہ جہانگیر کی نماز جنازہ جماعت اسلامی کے بانی مولانا مودودی کے صاحب زادے سید حیدر فاروق مودودی نے پڑھائی۔ نماز جنازہ میں سیاسی و سماجی شخصیات، وکلا ، سول سوسائٹی سے وابستہ افراد اور انسانی حقوق کے کارکنوں سمیت شہریوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔ عاصمہ جہانگیر کی نماز جنازہ میں شرکت کے لیے ملک کے دیگر حصوں سے بھی لوگ یہاں پہنچے تھے۔ عوامی نیشنل پارٹی کا ایک وفد بھی اے این پی کے رہنما افتخار حسین کی قیادت میں خاص طور پر نماز جنازہ میں شرکت کے لیے لاہور پہنچا تھا۔ نماز جنازہ کے موقع پر خواتین کی بڑی تعداد بھی وہاں موجود تھی۔

عاصمہ جہانگیر کی نماز جنازہ میں شرکت کرنے والوں میں چیئرمین سینٹ رضا ربانی، سابق وزیر خارجہ خورشید محمود قصوری، نجم سیٹھی، صحافی امتیاز عالم، وفاقی وزیر سعد رفیق، مہ ناز رفیع، اعتزاز احسن، علی احمد کرد ، پرویز رشید، افراسیاب خٹک ، افتخار حسین اور اکرم شیخ ایڈوکیٹ بھی شامل تھے۔

عاصمہ جہانگیر کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے پاکستان میں انسانی حقوق کے کمیشن کے سربراہ ڈاکٹر مہدی حسن نے ڈی ڈبلیو کو بتایا کہ عاصمہ نے اپنے چند ساتھیوں سے مل کر سن 1984 میں انسانی حقوق کے کمیشن کی بنیاد رکھی اور وہ پاکستان میں بے آواز لوگوں کی آواز بنیں۔ ’’زندگی اور موت اللہ کے ہاتھ میں ہے اور موت ایک حقیقت ہے لیکن عاصمہ کی موت سے پاکستان میں پیدا ہونے والا خلا شاید کبھی پورا نہ ہو سکے۔‘‘

ڈاکٹر مہدی حسن کے بقول عاصمہ جہانگیر نے قانون کی حکمرانی، انسانی حقوق کی پاسداری اور جمہوریت کی بالا دستی کے لیے گراں قدر خدمات سرانجام دیں۔ ان کا کہنا تھا، ’’ان کے راستے میں مصیبتوں کے پہاڑ کھڑے کیے گئے لیکن وہ ثابت قدمی سے اپنے مقصد کے لیے ڈٹی رہیں۔‘‘

عاصمہ جہانگیر کے حوالے سے پاکستانی معاشرے میں پائی جانے والی تقسیم کے حوالے سے پوچھے جانے والے ایک سوال کے جواب میں ڈاکٹر مہدی حسن نے بتایا کہ پاکستان میں ایک مخصوص طبقہ حالات کو ہمیشہ مذہبی حوالوں سے دیکھتا ہے۔ ان کے بقول، ’’پاکستانی معاشرے میں مذہبی انتہا پسندی کا حامل ایک اقلیتی طبقہ پورے پاکستانی معاشرے کو اس وقت کنٹرول کر رہا ہے۔لیکن ہماری کوشش ہو گی کہ عا صمہ کے بعد بھی ان کے جلائے ہوئے چراغ کو بجھنے نہ دیں اور یہ جدو جہد جاری رہے۔‘‘

COURTESY DW

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Ad
Ad
Ad

MARQUEE

Policy for Eco-tourism will provide livelihood to local communities

AMN / NEW DELHI GOVERNMENT OF INDIA has prepared a policy for Eco-tourism in forest and wildlife areas, which ...

Living index: Pune best city to live in, Delhi ranks at 65

The survey was conducted on 111 cities in the country. Chennai has been ranked 14 and while New Delhi stands a ...

Ad

@Powered By: Logicsart