FreeCurrencyRates.com

इंडियन आवाज़     20 Sep 2018 10:46:47      انڈین آواز
Ad

سنیئر صحافی شجاعت بخاری کا قتل

shujaat

نیوز ڈیسک
سرینگر//بندوق برداروں کے حملے میں جان بحق سنیئر صحافی اور انگریزی روزنامہ رائزنگ کشمیر کے چیف ایڈیٹر شجاعت بخاری صحافی کی دنیا میں ایک معروف نام تھے ۔سال2008میں اپنا اخبار رائزنگ کشمیر کے نام سے شروع کیا ،جبکہ اردو میں روزنامہ بلند کشمیر اور کشمیری زبان میں روزنامہ سنگرمال بھی سرینگرسے شائع کیا۔شجاع بخاری اپنا اخبار شروع کرنے سے قبل اخبار دی ہندو کے نامہ نگار تھے،اور کئی برسوں تک اس اخبار سے وابستہ رہے۔ شجاع بخاری نے جب دی ہندو کو خیرآباد کیا تو اسوقت وہ بطور سینئر اسسٹنٹ ایڈیٹر کام کررہے تھے اور پھر رائزنگ کشمیر کو سنبھالا ۔ انہوں نے 90کی دہائی میں کشمیر کی صورتحال کی رپوٹنگ کی ۔انہیں صحافتی حلقے میں کافی عزت کی نگاہ سے دیکھا جاتا تھا۔ شجاعت کشمیر کی میڈیا کی بڑی ہستیوں میں سے تھے اور وہ ایسے چند صحافیوں میں تصور کئے جاتے تھے جنہیں ثقافت سے پیار تھا اور کئی سال تک ادبی مرکز کامراز کے سربراہ بھی رہے۔ شجاعت دو سال قبل سخت علیل تھے مگر بعد میں انکی طبعیت میں سدھار آیا ۔معروف صحافی ہونے کے علاوہ وہ مقامی کشمیری زبان کی تجدید کے لیے کافی سرگرم تھے،اور ادبی مرکز کامراز کے سربراہ بھی تھے۔ اپنے قلم سے شجاعت بخاری نے صحافی کی حیثیت سے اپنا لوہا منوایا تھا۔شجاعت بخاری نے دنیا کے کئی ممالک میں امن اور سکیورٹی کی کانفرنسوں میں حصہ لیا۔50 سالہ شجاعت نے سوگواران میں والدین، اہلیہ اور دو بچے چھوڑے ہیں۔ شجاعت بخاری ٹیلی ویژن بحث و مباحثوں میں بھی شرکت کرتے تھے،اور ایک منجھے ہوئے سیاسی تجزیہ نگار بھی تھے۔کشمیری ادب کو فروغ دینے میں کئی ایک تو صیفی انعامات سے بھی ان کو نوازا جاچکا تھا۔

shujaat funeral

نامعلوم مسلح افراد نے جمعرات کی شام معروف صحافی اور انگریزی روزنامہ رائزنگ کشمیر کے چیف ایڈیٹر سید شجاعت بخاری اور ان کے محافظین پر نزدیک سے گولیاں چلائی،جس میں شجاعت بخاری اپنے ذاتی محافظ سمیت موقعے پر ہی جان بحق ہوئے جبکہ ان کا دوسرا محافظ اسپتال میں زخموں کی تاب نہ لاکر چل بسا۔ عینی شاہدین کے مطابق نامعلوم اسلحہ بردارجن کی تعداد2بتائی جاتی ہے نے جمعرات کی شام کو انگریزی روزنامہ رائزنگ کشمیر کے چیف ایڈیٹر سید شجاعت بخاری کی گاڑی پر پریس کالونی میں دونوں طرف سے گولیاں چلائی،اور فرار ہوئے۔گولیوں کی آواز سے پریس کالونی گونج اٹھی،اور صحافی و دیگر عملہ جب دفاتر سے باہر آئے،تو انہوں نے شجاع بخاری اور انکے محافظین کو خون میں لت پت پایا،جس کی وجہ سے پریس انکلیو میں افراتفری اور کشیدگی کا ماحول پیدا ہوا۔ اس دوران پولیس بھی جائے واردات پر پہنچی اور اور انہوں نے شجاعت بخاری کو اسپتال پہنچایا،تاہم ڈاکٹروں نے انہیں مردہ قرار دیا۔ حملے میں شجاع بخاری کا ایک اور ذاتی محافظ پولیس اہلکار بھی زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسا،جبکہ شام دیر گئے ایک اور اہلکار ممتاز احمد بھی لقمہ اجل بن گیا۔شجاعت بخاری کی موت کی تصدیق کرتے ہوئے میڈیکل سپرانٹنڈنٹ ایس ایم ایچ ایس ڈاکٹر سلیم ٹاک نے کہاکہ صحافی شجاعت بخاری اور ان کا پی ایس او کو یہاں مردہ حالت میں لایا گیا جبکہ دوسرے محافظ کا یہاں آپریشن کیا گیا تاہم وہ بھی بعد میں زخموں کی تاب نہ لاکر چل بسے ۔انسپکٹر جنرل آف پولیس کشمیر نے بھی شجاعت بخاری کی موت کی تصدیق کرتے ہوئے کہاکہ پولیس اس حملے کی تحقیقات کررہی ہے جبکہ ایک سینئر پولیس آفیسر نے بتایا کہ شجاعت بخاری پر حملے کی تحقیقات خصوصی تحقیقاتی ٹیم کے ذریعے کرائی جائے گی ۔
۔پولیس ترجمان کے مطابق’’ابتدائی تحقیقات کے دوران معلوم ہوا ہے کہ یہ جنگجویانہ حملہ تھا،پولیس اس واقعے پر مذمت کا اظہار کرتی ہے،جبکہ تحقیقات کا سلسلہ شروع کیا گیا۔واضح رہے کہ گذشتہ برسوں میں پریس کالونی میں یہ تیسرے صحافی کی حملے میں موت کا واقعہ ہے۔اس سے قبل یکم فروری 2003میں نامعلوم مسلح افراد نے پرواز محمد سلطان ایڈیٹر نافا نیوز ایجنسی کو گولیاں مار کر ہلاک کیا جبکہ10ستمبر1995کو فوٹو جرنسلٹ مشتاق علی ایک بم حملے میں جان بحق ہوئے ۔گذشتہ28برسوں میں لگ بھگ6صحافی سرینگر میں مارے گئے ۔

حملہ بزدلانہ :راجناتھ سنگھ
نئی دہلی// وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ نے شجاعت بخاری کی موت پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے حملے کو بزدلانہ حرکت قرار دیا ہے۔ رائزنگ کشمیر کے مدیر اعلیٰ کی موت ایک بزدلانہ حرکت ہے۔ میں سجاعت بخاری کی موت پر صدمے میں ہوں۔ میری دعائیں اور تعزیت غمزدہ کنبہ کے ساتھ ہے۔

دہشت گردی نے اپنا گھنائونا چہراہ دکھایا : وزیر اعلیٰ
سرینگر //رائزنگ کشمیر اور بلند کشمیر کے مدیر اعلیٰ سید شجاعت بخاری کی ہلاکت کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے ریاستی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے واقعہ کو افسوس ناک قرار دیا ہے۔ ریاستی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹیوٹر پر اپنی تحریر میں کہاکہ’’ میں شجاعت بخاری کی موت سے صدمے میں ہوں اور اسکی موت پر تعزیت کا اظہار کرتی ہوں۔‘‘وزیر اعلیٰ نے لکھا ہے کہ دہشت گردی کی لعنت نے عید پر اپنا گھنائونا چہراہ دکھایا ہے۔ وزیر اعلیٰ نے اپنی تحریر میں مزید لکھا ہے کہ میں اس تشدد کی سخت الفاظ میں مذمت کرتی ہوں اور اللہ سے دعا کرتی ہوں کہ انہیں جنت نصیب ہو۔ وزیر اعلیٰ نے شجاعت بخاری کے اہل خانہ کے ساتھ ہمدردی کا بھی اظہار کیا ہے۔

جری صحافی تھے:راہل گاندھی
نئی دلی// کانگریس صدر راہل گاندھی نے شجاعت بخاری کے قتل کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہاکہ میں رائزنگ کشمیر کے ایڈیٹر شجاعت بخاری کی مسلح افراد کے ہاتھوں ہلاکت پر رنجیدہ ہوں ۔انہوں نے کہاکہ مرحوم شجاعت بخاری ایک بہادر صحافی تھے جنہوں نے جموں وکشمیر کے امن و انصاف کیلئے لڑائی لڑی ۔راہل گاندھی نے غمزدہ کنبے کے ساتھ تعزیت کا اظہار کیا ۔

اللہ شجاعت کو جنت نصیب کرے :عمر عبداللہ
سرینگر//نیشنل کانفرنس کے لیڈر عمر عبداللہ نے شجاعت بخاری کی موت پر افسوس کا اظہار کیا ہے۔ عمر عبداللہ نے اپنی تحریر میں لکھا ہے کہ میں پوری طرح صدمے میں ہوں۔ عمر عبداللہ نے لکھا ’’ میں بدترین سن رہا ہوں مگر اچھے کی اُمید ہے۔‘‘ اناللہ وناللہ راجعون ۔ میں سخت صدمے میں ہوں۔ اللہ تعالی انکو جنت اللہ فردوس نصیب کریں اور انکے اہلخانہ کو یہ صدمہ برداشت کرنے کی توفیق عطا کریں ، میں انکی دکھ کی اس گڑی میں انکے ساتھ ہوں۔

پریس کی آزادی پر حملہ:ایڈیٹرزگلڈ آف انڈیا
سرینگر//ایڈٹرز گلڈ آف انڈیا نے اپنی تحریر میں لکھا ہے کہ میں شجاعت بخاری کی موت پر افسوس کا اظہار کیا ہے۔ ایڈٹرز گلڈ آف انڈیا نے اپنی تحریر میں لکھا ہے کہ شجاعت بخاری بہادر تھے جنہوں نے ہمیشہ جموں و کشمیر میں انصاف اور امن کی لڑائی لڑئی۔ ایڈرز گلڈ آف انڈیا رائزنگ کشمیر کے مدیر اعلیٰ شجاعت بخاری کی ہلاکت کی مذمت کرتا ہے اور اسے پریس کی آزادی پر حملہ تصور کرتا ہے۔

انسانیت کا قتل:گیلانی
سرینگر //سینئر صحافتی سجاعت بخاری کی ہلاکت کی مذمت کرتے ہوئے حریت(گ)چیرمین سید علی گیلانی نے کہا ہے کہ کسی انسان کو بغیر کسی خطا کے قتل کرنا انسانی اور اخلاقی اقدار کے منافی ہے۔سید علی گیلانی نے کہا کہ خیالات میں تفریق کوئی جرم نہیں ہے اور کسی بھی شخص کو قتل کرنے کیلئے کافی نہیں ہے۔ گیلانی نے سینئر صحافی کے قتل پر تعزیت کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اللہ تعالی انہیں جنت الفردوس عطا کریں۔

ہلاکت سے مغموم ہیں:میرواعظ
سرینگر// حریت(ع)چیئرمین میرواعظ عمر فاروق نے سینئر صحافی شجاعت بخاری کی نامعلوم مسلح افراد کے ہاتھوں ہلاکت کو انتہائی افسوس ناک قرار دیتے ہوئے کہاکہ شجاعت بخاری کا قتل ناقابل معافی ہے ۔انہوں نے کہاکہ میں معروف صحافی سید شجاعت بخاری کی ہلاکت پر غمگین ہوں اور اس غیر انسانی و قابل مذمت اقدام کی سخت الفاظ میں مذمت کرتا ہوں ۔میرواعظ عمر فاروق نے اپنے ٹویٹ پیغام میں کہاکہ مرحوم شجاعت بخاری ایک جری اور باصلاحیت دانشور و صحافی تھے اور وہ عوام سے متعلق بہت ہی متفکر انسان تھے ۔میرواعظ نے غمزدہ کنبے کے ساتھ دلی تعزیت کا اظہار کیا ۔

بدترین سفاکیت :یاسین ملک
سرینگر// لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک نے معروف صحافی اور دانشور سید شجاعت بخاری کے سفاکانہ قتل کی سخت الفاظ میںمذمت کرتے ہوئے اسے بدترین سفاکیت ، اظہار رائے کی آزادی کا قتل اور ایک نفیس آواز کو خاموش کردینے کا مکروہ عمل قرار دیا ہے۔ سید شجاعت بخاری پر ہونے والے حملے اور ان کے قتل کو بربریت اور سفاکیت کی بدترین مثال قرار دیتے ہوئے یاسین ملک نے کہا کہ اس مذموم واقعے نے پوری کشمیری قوم کو مغموم و مضطرب کردیا ہے کیونکہ ہم سے ہمارا ایک روشن دماغ چھین لیا گیا ہے۔ یاسین ملک نے سید شجاعت بخاری کی جنت نشینی کیلئے اللہ تعالیٰ سے دعا کرتے ہوئے ان کے غم زدہ لواحقین اور بچوں کے ساتھ دلی تعزیت و یکجہتی کا اظہار بھی کیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Ad
Ad
Ad

MARQUEE

Policy for Eco-tourism will provide livelihood to local communities

AMN / NEW DELHI GOVERNMENT OF INDIA has prepared a policy for Eco-tourism in forest and wildlife areas, which ...

Living index: Pune best city to live in, Delhi ranks at 65

The survey was conducted on 111 cities in the country. Chennai has been ranked 14 and while New Delhi stands a ...

Ad

@Powered By: Logicsart